مورخہ : 5.3.2016 بروز ہفتہ

کنڈل ڈیم صوابی اے این پی دور حکومت کا میگا پروجیکٹ ہے ۔ سردار حسین بابک
صوبائی حکومت ڈیم کا کام کو مکمل ہونے کیلئے فوری طور پر 480 ملین روپے جاری کر دیں ۔
موجودہ حکومت کو اے این پی دور حکومت کے اسی طرح کے بڑے منصوبوں پر اپنی تختیاں لگانے کا شوق ہے۔

پشاور (پریس ریلیز ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری اور پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ کنڈل ڈیم صوابی اے این پی دور حکومت کا میگا پروجیکٹ ہے ۔ جس سے تقریباً 13340 ایکڑ بنجر زمین سیراب ہو گی۔ اسی منصوبے کا ٹینڈر 2012 میں ہو چکا ہے۔ لیکن بدقسمتی سے موجودہ صوبائی حکومت مقررہ فنڈز جاری کرنے میں لیت و لعل سے کام لے رہی ہے۔ آبپاشی کے بڑے منصوبے کو دسمبر 2016 میں مکمل ہونا ہے۔ جس سے صوابی اور ملحقہ بونیر کے علاقے ڈاگئی ، طوطالئی کے بنجر زمینیں سیراب ہونگی اور علاقے میں زرعی انقلاب برپا ہوگا۔
اُنہوں نے کہا کہ سابق وزیرا علیٰ امیر حیدر خان ہوتی کی ذاتی دلچسپی کی وجہ سے صوابی اور بونیر کے ہزاروں ایکڑ زمین کے مالکان کی درخواست بڑے منصوبے کیلئے فنڈز کی دستیابی یقینی بنا کر ہنگامی بنیادوں پر کام شروع ہو چکا ہے۔ لیکن موجودہ صوبائی حکومت کی فنڈزکی عدم دستیابی کی وجہ سے ڈیم کی بروقت تکمیل ناممکن لگ رہی ہے ۔ اُنہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت ہزاروں ایکڑ بنجر زمین کی سیرابی کی خاطر ڈیم کا کام کو مکمل ہونے کیلئے فوری طور پر 480 ملین روپے جاری کر دیں تاکہ اس بڑے آبپاشی منصوبے کی بروقت تکمیل ممکن ہو سکے اور علاقے کے زمینداروں اور کاشتکاروں کی دیرینہ ضرورت اور مطالبہ کو عملی جامہ پہنایا جا سکے۔ اُنہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کو اے این پی دور حکومت کے اسی طرح کے بڑے منصوبوں پر اپنی تختیاں لگانے کا شوق ہے۔ لیکن ان میگا پروجیکٹس کے فنڈز کی فراہمی میں نہایت سست روی سے کام لے رہی ہے