2016 وزیر اعظم نے کاریڈور کے ایشو پر اے پی سی کے فیصلوں پر عمل کیا ہوتا تو تنازعے کی نوبت نہیں آئی ہوتی۔امیر حیدر خان ہوتی

وزیر اعظم نے کاریڈور کے ایشو پر اے پی سی کے فیصلوں پر عمل کیا ہوتا تو تنازعے کی نوبت نہیں آئی ہوتی۔امیر حیدر خان ہوتی

وزیر اعظم نے کاریڈور کے ایشو پر اے پی سی کے فیصلوں پر عمل کیا ہوتا تو تنازعے کی نوبت نہیں آئی ہوتی۔امیر حیدر خان ہوتی

مورخہ : 14.1.2016 بروز جمعرات

وزیر اعظم نے کاریڈور کے ایشو پر اے پی سی کے فیصلوں پر عمل کیا ہوتا تو تنازعے کی نوبت نہیں آئی ہوتی۔امیر حیدر خان ہوتی
مسئلے کے حل کیلئے وزیر اعظم کو اب خود آگے آنا ہوگا تاکہ خدشات کا ازالہ ہو سکے۔
اے این پی حکومت سے باہر رہنے کے باوجود پشتونوں کے حقوق کیلئے جدوجہد کرتی رہے گی۔
کرک میں صحافیوں سے بات چیت

پشاور ( پریس ریلیز) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ اگر وزیر اعظم نواز شریف چائنا پاک اکنامک کاریڈور کے معاملے پر آل پارٹیز کانفرنس کے فیصلوں اور اپنے اعلان سے روگردانی نہ کرتے تو نہ اعتراضات کی نوبت آتی اور نہ ہی اس ایشو نے متنازعہ صورت اختیار کی ہوتی۔
کرک میں فرید طوفان کی والدہ کی فاتحہ خوانی کے بعد اے این پی کے رہنما خورشید خٹک کی رہائش گاہ پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ مسئلے کے حل کیلئے وزیر اعظم کو اب خود آکر صوبوں اور سیاسی قیادت کی تسلی کرنی ہوگی تاکہ اس معاملے پر پائی جانے والی بے چینی کا خاتمہ کیا جائے اور ان خدشات کا ازالہ کیا جائے جن کا صوبوں اور ملک کی اکثر سیاسی قوتوں کو سامنا ہے۔
ایک سوال کے جواب میں اُنہوں نے کہا کہ اے این پی کے دور حکومت میں مرکزی حکومت کو قائل کیا گیا تھا کہ جنوبی اضلاع میں آئل ریفائنری کے قیام کا اقدام اُٹھایا جائے تاکہ مقامی آبادی کو مستفید ہونے دیا جائے۔ اُنہوں نے کہا کہ کرک میں قائم خوشحال خان یونیورسٹی یہاں کے عوام کیلئے اے این پی کا تحفہ ہے۔ تاہم یہ بات قابل افسوس ہے کہ یونیوسٹی کی عمارت کی تعمیر میں غفلت اور تاخیر سے کام لیا جا رہا ہے جو کہ یہاں کے عوام کے ساتھ کھلی زیادتی ہے۔
اُنہوں نے کہا کہ اے این پی دور حکومت کے اصلاحات اور اقدامات تاریخ کا حصہ ہیں اور اس کا نتیجہ ہے کہ صوبے کے عوام کو اب جاکر معلوم ہو گیا ہے کہ اے این پی نے صوبے کیلئے کیا اقدامات کیے تھے اور ان کے کتنے اچھے تاثرات مرتب ہوتے آئے ہیں۔
اُنہوں نے کہا کہ اے این پی حکومت سے باہر رہنے کے باوجود صوبے اور پشتونوں کے حقوق کے حصول اور مفادات کے تحفظ کیلئے اپنا فعال کردار ادا کرتی رہے گی۔ قبل ازیں امیر حیدر خان ہوتی اور پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کرک میں فرید طوفان کی والدہ کے انتقال پر اہل خانہ کیساتھ اظہار تعزیت کیا اور فاتحہ خوانی کی۔

شیئر کریں