مورخہ :23.2.2016 بروز منگل

صوبائی حکومت مقامی کاروبار اور صنعتوں کی تباہی پر تلی ہوئی ہے۔ ہارون بشیر بلور
حکومت کے منفی رویے کے باعث صوبے کی پرنٹنگ انڈسٹری کو نقصان پہنچ رہا ہے۔
درسی کتب کی طباعت کا آزمودہ اور پرانا طریقہ کار بحال کرکے انڈسٹری کو تباہی سے بچایا جائے۔

پشاور(پ،ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی ترجمان ہارون بشیر بلور نے درسی کتب کی طباعت کے پرانے طریقہ کار میں تبدیلی کی حکومتی پالیسی پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ خیبر پختونخوا ٹیکسٹ بک بورڈ کے غلط رویے اور اقدامات سے صوبے کی پرنٹنگ انڈسٹری کو سخت نقصان پہنچ رہا ہے اور اس سے ہزاروں افراد کی بیروزگاری کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے۔
اپنے ایک بیان میں اُنہوں نے کہا ہے کہ صوبے کی معیشت پہلے ہی سے دہشتگردی کے باعث شدید مشکلات اور زبوں حالی کا سامنا ہے۔ اس پر ستم یہ کہ حکومت اپنے اقدامات کے ذریعے رہی سہی کسر پوری کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ تمام سرکاری اداروں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ صوبے کی مقامی انڈسٹریز کی مزید ترقی کیلئے ان کے ساتھ تعاون کرے اور ترجیحی بنیادوں پر ان کی مراعات اور سہولیات میں اضافہ کرے۔ تاہم مشاہدے میں آیا ہے کہ حکومت پہلے ہی سے موجود کاروبار اور صنعتوں کی تباہی کی راہ پر گامزن ہے۔
اُنہوں نے مطالبہ کیا کہ پرنٹنگ انڈسٹری کو تباہی سے بچانے کیلئے حکومت اپنی پالیسی پر نظر ثانی کرے اور درسی کتب کی طباعت کا برسوں پرانا آزمودہ طریقہ کار پھر سے بحال کیا جائے تاکہ مقامی انڈسٹری کے حقوق کا تحفظ کیا جا سکے اور اس کی مزید ترقی کی راہیں کھول دی جائیں۔