مورخہ : 6.2.2016 بروز ہفتہ

صوبائی حکومت اپنے ہی متعارف کردہ بلدیاتی نظام کی تباہی پر تلی ہوئی ہے۔ سردار حسین بابک
لوکل گورنمنٹ ایکٹ کے تحت بلدیاتی نمائندوں کو فنڈز اور اختیارات دینا حکومت کی آئینی ، قانونی ذمہ داری ہے۔
حکومتی رکاوٹوں اور رویے نے بلدیاتی نمائندوں کو کنفیوز کر دیا ہے۔ سپریم کورٹ اس ایشو پر سوموٹو ایکشن لے۔

پشاور ( پریس ریلیز) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت اپنے ہی بلدیاتی نظام کو ناکام بنانے پر تلی ہوئی ہے۔ باچا خان مرکز میں بلدیاتی نمائندوں کے ایک وفد سے بات چیت کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات نہ دینا اور فنڈز میں رکاوٹیں اور لیت و لعل سے کام لینا انتہائی ناانصافی ہے۔ لوکل گورنمنٹ ایکٹ کے مطابق تمام بلدیاتی اداروں کو فنڈز جاری کرنا حکومت کی قانونی ذمہ اری بنتی ہے۔ لیکن صوبے کے طول و عرض میں بلدیاتی نمائندے روزانہ کی بنیاد پر فنڈز اور اختیارات کیلئے احتجاج پر مجبور ہیں۔ اُنہوں نے بلدیاتی نظام کے قواعد و ضوابط پر سخت احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ بلدیاتی نظام کے تحت صوبائی حکومت نے بلدیاتی نمائندوں کے ہاتھ پاؤں باندھے ہوئے ہیں اور وہ زمینی ضروریات کے مطابق فنڈز خرچ کرنے کا اختیار نہیں رکھتے۔
اُنہوں نے کہا کہ بلدیاتی نمائندوں کا بہت سارا وقت ضائع کر دیا گیا ہے اور حکومتی قواعد و ضوابط نے اُنہیں کنفیوز بنادیا ہے۔ اختیارات کی نچلی سطح پر منتقلی کا نعرہ لگانے والے صوبے کے بلدیاتی نمائندوں کی تنظیم سے ملاقات تک گوارا نہیں کرتے تاکہ ان کی مشکلات اور مسائل کو حل کیا جا سکے۔اُنہوں نے مزید کہا کہ بلدیاتی نمائندے عوام کے منتخب نمائندے ہیں ۔ ان کے اختیارات سلب کرنا اور ان کیلئے مشکلات پیدا کرنا جمہوری روایات کے منافی ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ حکومت بلدیاتی نظام کو چلنے دیا جائے اور ان کے قانونی اختیارات میں رکاوٹ بننے سے گریز کیا جائے اور زمینی حقائق اور مفاد عامہ کے ضروریات کے مطابق فنڈز خرچ کرنے کے طریقہ کار پر قدغنیں ختم کی جائیں۔ اُنہوں نے الزام لگایا کہ صوبائی حکومت بلدیاتی نمائندوں کے فنڈز اور اختیارات اپنے پاس رکھنے کیلئے نہ صرف رکاوٹیں کھڑی کر رہی ہے بلکہ ان کا قیمتی وقت بھی ضائع کر رہی ہے۔
سردار حسین بابک نے سپریم کورٹ آف پاکستان سے اپیل کی کہ جس طرح بلدیاتی انتخابات میں لیت و لعل سے کام لینے والے صوبائی حکومت کو بلدیاتی انتخابات پر مجبور کر دیا۔ اس طرح بلدیاتی نمائندوں کے اختیارات اور فنڈز کی فراہمی کیلئے سوموٹو ایکشن لیا جائے تاکہ بلدیاتی نظام کو تباہ کرنے سے بچایا جائے اور حکومت کے منفی طرز عمل کا راستہ روکا جا سکے۔