مورخہ 2مئی 2016بروز پیر

خیبر پختونخوا بجلی کی پیداوار میں خود کفیل لیکن ڈور پنجاب کے ہاتھ میں ہے، سردار حسین بابک
اے این پی نے اپنے دور میں پن بجلی کے متعدد منصوبے شروع کئے جنہیں مکمل کرنے سے اضافی بجلی پیدا کی جا سکتی ہے
کوریڈور ، نیشنل ایکشن پلان جیسے ایشو پر اے این پی کا مؤقف زمینی حقائق کے تناظر میں جرأتمندانہ ہے
پاک چائنہ اکنامک کوریڈور پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا
صحت مند اور پر امن معاشرے کیلئے طلباء غیر نصابی سرگرمیوں میں حصہ لیں، فرنٹیئر لاء کالج میں تقریب سے خطاب

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ پاک چائنہ اکنامک کوریڈور پر اے این پی کا مؤقف واضح ہے اور پارٹی نے پہلے ہی دن سے واضح کر دیا تھا کہ اس منصوبے پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا ،ان خیالات کا اظہار انہوں نے فرنٹیر لاء کالج میں تقسیم اسناد کی ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ،اس موقع پر انہوں نے کورس مکمل کرنے والے طلباء و طالبات میں اسناد تقسیم کیں ، اپنے خطاب میں انہوں نے مزید کہا کہ کاریڈور سمیت تمام اہم ایشوز پر پارٹی نے صوبے اور فاٹا کے حقوق اور اختیارات کی جدوجہد میں بنیادی کردار ادا کر کے یہ ثابت کیا ہے کہ خطے کی سیاسی نمائندگی پر کسی کو بھی سودے بازی کی اجازت نہیں دی جائے گی ،اور پارٹی کے اس کردار کے نتائج اور اثرات کا عوام کے علاوہ بعض سیاسی مخالفین بھی وقتاً فوقتاً اعتراف کرتے آئے ہیں انہوں نے کہا کہ اسفندیار ولی خان ہی وہ واحد لیڈر ہیں جن کی وجہ سے سی پیک میں مغربی روٹ کا معاملہ سب سے پہلے اٹھایا گیا ، انہوں نے کہا کہ صوبے میں پن بجلی کے بیشتر مواقع موجود ہیں تاہم ان پر فی الفور کام کرنے کی ضرورت ہے جس سے صوبے میں لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کرنے میں مدد مل سکتی ہے ، انہوں نے کہا کہ اے این پی نے اپنے دور اقتدار میں پن بجلی کے کئی منصوبے شروع کئے جو تاحال ادھورے ہیں اور کسی نے انہیں مکمل کرنے کی کوشش نہیں کی ، سردار حسین بابک نے کہا کہ خیبر پختونخوا اپنی ضرورت سے زیادہ بجلی پیدا کرنے والا صوبہ ہے تاہم اس کی ڈور پنجاب کے ہاتھوں میں ہے ،انہوں نے کہا کہ آج جو حقوق صوبے کو حاصل ہیں اس کا کریڈٹ بھی اے این پی کو جاتا ہے ،انہوں نے کہا کہ کوریڈور ، نیشنل ایکشن پلان ،پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات اور دہشت گردی جیسے ایشو پر اے این پی کا مؤقف زمینی حقائق کے تناظر میں قطعاً واضح اور جرأتمندانہ ہے اور ہم اپنے عوام کے حقوق کیلئے ماضی کی طرح مستقبل میں بھی کسی قسم کی جدوجہد یا قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔انہوں نے طلباء سے کہا کہ وہ فارغ التحصیل ہونے کے بعد قانون کے شعبے میں اپنی توانائیاں بروئے کار لائیں اور حق و انصاف کا ساتھ کسی صورت نہ چھوڑیں ، انہوں نے قانون وراثت کا خصوصی طور پر ذکر کیا اور کہا کہ طلباء اس سلسلے میں شعور اجاگر کرنے کیلئے اپنی تمام تر توانائیاں بروئے کار لائیں ،انہوں نے کہا کہ طلباء کو تعلیمی سرگرمیوں کے ساتھ ساتھ غیر نصابی سرگرمیوں میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لینا چاہئے تا کہ ایک صحت مند اور پر امن معاشرے کا قیام عمل میں لایا جا سکے،صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ نصاب میں جدید دور کے تقاضوں کے مطابق تبدیلیاں بھی اے این پی دور کا کارنامہ ہے جبکہ ’’ستوری دَ پختونخوا ‘‘ اور’’ روخانہ پختونخوا‘‘ جیسے منصوبے بھی قابل ذکر ہیں ،انہوں نے کہا کہ عوام کا اعتماد سرکاری سکولوں پر بحال کرنے کا سہرا بھی اے این پی کے سر جاتا ہے ، جبکہ ہم نصابی سرگرمیوں کو فروغ دیا گیا