مورخہ : 18.4.2016 بروز پیر

خیبر بینک سمیت صوبے کے آثاثوں کا ہر قیمت پر تحفظ کیا جائیگا ۔ سردار حسین بابک
اگر حکومت اور ان کے اتحادیوں نے اپنی پالیسیوں اور رویوں پر نظر ثانی نہیں کی تو ان کی کھلی مزاحمت کی جائیگی۔
* ملاکنڈ ڈویژن کے عوام کو ان کی قربانیوں کا صلہ ظالمانہ کسٹم ایکٹ کے نفاذ کی صورت میں دیا گیا۔
سن2018 موجودہ حکمرانوں کے سیاسی محاسبے کا سال ثابت ہو گا۔ بونیر کے مختلف علاقوں میں شمولیتی اجتماعات سے خطاب

پشاور ( پریس ریلیز) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری اور پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ ملاکنڈ ڈویژن کے لاکھوں لوگوں نے دہشتگردی کے خاتمے اور امن کے قیام کیلئے مثالی قربانیاں دیں تاہم حکومت نے ان کی قربانیوں کا صلہ کسٹم ایکٹ کے نفاذ جیسے ظالمانہ فیصلے اور مراعاتی پیکجز کی واپسی کی صورت میں دیا۔
بونیر کے علاقوں خانپور اور اخون خیلو ڈھیرئی میں شمولیتی اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ کسٹم ایکٹ کا نفاذ ملاکنڈ ڈویژن کے عوام کیساتھ کھلی زیادتی ہے۔ حالانکہ لاکھوں لوگوں نے شدت پسندی کے خاتمے کیلئے نہ صرف یہ کہ جان و مال کی قربانیاں دیں بلکہ کئی برسوں تک علاقہ بدترین معاشی بدحالی ، انفراسٹرکچر کی تباہی اور دیگر مشکلات کا شکار رہا۔ ضرورت اس بات کی تھی کہ متاثرہ علاقوں کی بحالی کے علاوہ عوام کی ترقی اور خوشحالی کیلئے خصوصی پیکجز کا اقدام اُٹھایا جاتا مگر حکومت نے کسٹم ایکٹ کے نفاذ کی شکل میں ظالمانہ اور یکطرفہ فیصلہ کرکے عوام کی قربانیوں کا مذاق اُڑایا۔ اُنہوں نے کہا کہ اے این پی ایکٹ کی واپسی تک عوام کیساتھ مل کر اپنی سیاسی جدو جہد جاری رکھے گی اور عوام کے حقوق کے حقوق کیلئے کسی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی