مورخہ 8 مئی 2016ء بروز اتوار

حکیم اللہ محسود کے بل بوتے پر اقتدار حاصل کرنے والوں کا وقت ختم ہو چکا ، سردار حسین بابک
صوبے کو تجربہ گاہ میں تبدیل کر دیا گیاہے اور عوام پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کے اپنے فیصلے پر پچھتا رہے ہیں
حکمرانوں نے سیاست اور حکومت کو مذاق بنا دیا ہے اور ان کو صوبے کے مفادات اور حقوق سے کوئی سروکار نہیں
خیبر بنک سکینڈل کی رپورٹ منظر عام پر نہ لا کر ایک بار پھر کرپشن کی گئی ،بلین ٹری میں بڑے بڑے نام سامنے آ رہے ہیں
حکومت منظم سازش کے تحت صوبے کے قیمتی اثاثوں کو تخت لاہور اور تخت اسلام آباد کیلئے استعمال کر رہی ہے
اے این پی اپنے راستے میں رکاوٹ بننے والی ہر دیوار سے ٹکرا سکتی ہے،صوابی میں شمولیتی تقاریب سے خطاب

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ پختون قوم تبدیلی کے نام پر ووٹ دے کر پچھتا رہی ہے تاہم اب 2018 کے الیکشن میں کوئی حکیم اللہ محسود پی ٹی آئی کو سپورٹ کرنے نہیں آئے گا،صوبے میں نسبتاً جو امن قائم تھا اس کا تمام کریڈٹ اے این پی کو جاتا ہے اور اس امن میں ہمارے سینکڑوں شہداء کا خون شامل ہے ،تاہم موجودہ صوبائی حکومت کی غیر ذمہ دارانہ پالیسیوں کے باعث دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ ہو گیا ہے پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت نے تبدیلی کے نام پر صوبے کے عوام کو دھوکہ دیا ہے، حکمرانوں نے سیاست اور حکومت کو مذاق بنا دیا ہے اور ان کو صوبے کے مفادات اور حقوق سے کوئی سروکار نہیں اور یہی وجہ ہے کہ عوام یہ بات جان چکے ہیں کہ صوبے کے حقوق کا تحفظ اے این پی کے بغیر کوئی دوسری قوت نہیں کر سکتی ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے صوابی میں موضع کڑی اور پنج من کے مقامات پرمنعقدہ شمولیتی تقاریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر سے سینکڑوں افراد نے اپنی پارٹیوں سے مستعفی ہو کر اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا ، سردار حسین بابک نے پارٹی میں شامل ہونے والوں کو سرخ ٹوپیاں پہنائیں اور انہیں مبارکباد دی ، اپنے خطاب میں انہوں نے مزید کہا کہ اے این پی پختونوں کے حقوق کی محافظ جمہوریت پسند اور خدائی خدمت گار تحریک کی تسلسل جماعت ہے اور اپنے راستے میں آنے والی ہر دیوار کو گرانے کی طاقت رکھتی ہے، انہوں نے کہا کہ ماضی میں اس جماعت کو کمزور کرنے کی ناکام کوششیں کی گئیں لیکن سہاروں اور دہشتگردوں کی معاونت سے ایوانوں میں پہنچنے والوں کی سازشیں ناکام ہوئیں اور وقت کی ہماری وکالت کرتے ہوئے ثابت کیا کہ ہم پر کیچڑ اچھالنے والے خود اس جال میں پھنس گئے ،انہوں نے کہا کہ خیبر بنک سکینڈل کی رپورٹ تاحال منظر عام پر نہیں لائی گئی جس کا واضح مطلب یہ ہے کہ دال میں ضرور کچھ کالا ہے،جبکہ حقائق کو چھپانا بھی سب سے بڑی کرپشن ہے ، سردار حسین بابک نے کہا کہ خیبر بنک کی نجکاری کی مذموم سازش کبھی کامیاب نہیں ہونے دینگے جبکہ بلین ٹری سونامی میں بھی اب بڑے بڑے نام سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں ، انہوں نے کہا کہ محکمہ صحت اور دیگر شعبوں کو پی ٹی آئی کے مالی معاونین کے ہاتھوں فروخت کرنے پر اے این پی کبھی خاموش نہیں رہے گی ،صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت منظم سازش کے تحت صوبے کے قیمتی اثاثوں کو تخت لاہور اور تخت اسلام آباد کیلئے استعمال کر رہی ہے ، انہوں نے کہا کہ اے این پی کی تاریخ قربانیوں سے بھری پڑی ہے جو لوگ ماضی میں کونسلر بننے کے اہل نہیں تھے وہ حکیم اللہ محسود کی معاونت سے ایوانوں تک جا پہنچے تاہم 2018میں کوئی حکیم اللہ نہیں آئے گا اور پختون قوم اپنے ساتھ دھوکہ کرنے والوں کو گھر بھیج دے گی ، انہوں نے کہا کہ آئندہ الیکشن میں اے این پی کلین سویپ کرے گی اور صوبے میں ترقی کا رک جانے والا پہیہ دوبارہ چلنے لگے گا، انہوں نے کہا کہ صوبے کی خوشحالی اور ترقی کیلئے ہم نے اپنی حکومت میں جو منصوبے مکمل کئے ملک کی 65سالہ تاریخ میں اس کی مثال نہیں ملتی تاہم یہ بات قابل افسوس ہے کہ آج ایسے لوگوں کو اقتدار سونپا گیا ہے جن میں نہ تو حکومت چلانے کی صلاحیت ہے ا ور نہ ہی انہیں صوبے کے مفادات سے کوئی دلچسپی ہے موجودہ حکمرانوں نے صوبے کو تجربہ گاہ میں تبدیل کر دیا ہے اور اسی کا نتیجہ ہے کہ عوام ووٹ دینے کے اپنے فیصلے پر پچھتا رہے ہیں اور اے این پی اس خطے کی نمائندہ پارٹی کے طور پر پھر سے اپنی جگہ پا رہی ہے ، انہوں نے کہا کہ بہت سی قوتیں انتہا پسندی کے معاملے پر مصلحت ، خوف اور دباؤ کا شکار ہیں تاہم اے این پی تمام تر قربانیوں ، زیادتیوں اور دباؤ کے باوجود میدان میں ڈٹی ہوئی ہے اور ہماری تحریک ، جدوجہد اس وقت تک جاری رہے گی جب تک اس خطے اور صوبے کو امن اور ترقی کا گہوارا نہیں بنایا جاتا ، انہوں نے کہا کہ اے این پی 2018ء کے الیکشن کیلئے بھرپور تیاری کر رہی ہے۔ تقاریب سے اے این پی کی سینیٹر ستارہ ایاز اور ضلعی جنرل سیکرٹری محمد اسلام خان نے بھی خطاب کیا ۔