مورخہ 20مارچ 2016ء بروز اتوار
حکومت کا غیر ذمہ دارانہ اور غافلانہ رویہ عوام کے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے، سردار حسین بابک
بے روزگاری میں ریکارڈ اضافے کی بنیادی وجہ حکومتی نا اہلی ہے جو ترقیاتی فنڈز بر وقت خرچ کرنے میں بُری طرح ناکام رہے
دہشت گردی کے بڑھتے ہوئے واقعات اور ٹارگٹ کلنگ سے معمولات زندگی مفلوج ہو چکے ہیں
صوبے کے عوام نے نا اہل حکومت دیکھ لی ہے،ھکمران کوآئندہ الیکشن میں منہ چھپانے کی جگہ نہیں ملے گی
بجلی منافع کے 385ارب روپے کی بجائے 70ارب روپے پر ڈیل کر کے خیبر پختونخوا کے غریب عوام کے حقوق پر سودے بازی کی گئی

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ بھتہ خوری، اغواء برائے تاوان اور بدامنی نے صوبے اور فاٹا کے عوام کی زندگی اجیرن کر دی ہے جبکہ دہشت گردی کے بڑھتے ہوئے واقعات اور ٹارگٹ کلنگ سے معمولات زندگی مفلوج ہو چکے ہیں ، اے این پی سیکرٹریٹ سے جاری بیان میں سردار حسین بابک نے کہا کہ کاروباری اور تجارتی حلقوں میں شدید تشویش کی لہر جاری ہے اور کاروباری اور تجارتی سرگرمیاں نہ ہونے کے برابر ہیں، انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت کی عدم دلچسپی اور غفلت نے عوام کی مشکلات میں مزید اضافہ کر دیا ہے اور حکمران اپنی ذمہ داریاں نبھانے میں بُری طرح ناکام ہو ہو چکے ہیں، انہوں نے کہا کہ ایک طرف بدامنی ،خوف، وحشت اور دہشت کے ماحول لوگوں کو مشکلات سے دوچار کر دیا ہے جبکہ دوسری طرف حکومت کا غیر ذمہ دارانہ اور غافلانہ رویہ عوام کے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے ،انہوں نے کہا کہ اے این پی پر امریکہ کے ایجنٹ ہونے کا الزام لگانے والے آج خود صوبائی حکومت میں بیٹھے ہیں اور عوام اُن سے جواب چاہتے ہیں کہ آج ہونے والے دھماکوں اور بھتہ خوری میں کون لوگ ملوث ہیں،انہوں نے کہا کہ حکومت کو زبانی جمع خرچ سے نکلنا ہو گا اور اپنی آئینی اور حکومتی ذمہ داری پوری کرنا ہوگی ، انہوں نے صوبے کی مجموعی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ دور حکومت میں بے روزگاری میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے اور اس کی بنیادی وجہ حکومت نا اہلی ہے کہ وہ فنڈز بر وقت خرچ کرنے میں بُری طرح ناکام رہے ہیں انہوں نے کہا کہ حکومت اپنے دورانیے کے تیسرے بجٹ کو وقت پر خرچ نہ کر کے عوام کو کیا پیغام دینا چاہتی ہے ، انہوں نے حیرت کا اظہار کیا کہ دوسروں پر الزامات لگانے والے اپنی حکومت پر توجہ دینے کیلئے فارغ ہی نہیں ہیں ،صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ صوبے کے عوام نے بڑے بڑے دعوؤں اور وعدوں کے علمبرداروں کی حکومت بڑی قریب سے دیکھ لی ہے،اور انہیںآئندہ الیکشن میں منہ چھپانے کی جگہ نہیں ملے گی ، انہوں نے کہا کہ 2013ء کے الیکشن میں اے این پی کو دیوار سے لگانے والے ہی صوبے پر نا اہل حکومت مسلط کرنے کے ذمہ دار ہیں ، انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے بجلی منافع کے 385ارب روپے کے عوض 70ارب روپے پر مرکزی حکومت کے ساتھ ڈیل کر کے خیبر پختونخوا کے غریب عوام کے حقوق پر سودے بازی کی ہے جس پر اے این پی انہیں کسی طور معاف نہیں کرے گی ،انہوں نے صوبائی حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ صوبے کے محدود وسائل اور گھمبیر مسائل کے باوجود صوبائی حکومت کی طرف سے فنڈز کابروقت استعمال نہ ہونا اور صوبائی حقوق پر سودے بازی ناقابل معافی جرم ہے۔