مورخہ : 11.2.2016 بروز جمعرات

حکومت نیشنل ایکشن پلان کے معاملے پر مجرمانہ غفلت کا مظاہرہ کر رہی ہے۔ زاہد خان
دہشتگردی کے پیچھے محرکات کا سراغ لگانے کیلئے تاحال جوڈیشل کمیشن قائم نہیں کیا گیا۔
ڈی جی آئی بی کی بریفنگ سے ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت ٹھوس حکومت عملی میں ناکام ہو چکی ہے۔

پشاور ( پریس ریلیز) عوامی نیشنل پارٹی کے سیکرٹری اطلاعات زاہدخان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ملک میں ہونے والے دہشت گردی کے بڑے واقعات کے پیچھے مجرمانہ ذہنیت سے آگاہی کیلئے پوری قوم منتظر ہے اور سانحہ اے پی ایس پشاور اور باچاخان یونیورسٹی چارسدہ کے بارے میں بھی ابھی تک جوڈیشل کمیشن قائم نہیں کیا گیا ۔زاہد خان نے مزید کہا کہ اے این پی کافی عرصے سے چیخ رہی ہے کہ نیشنل ایکشن پلان پر من وعن عمل درآمد کرنے سے ہی ملک کو دہشت گردی سے پاک کیا جا سکتاہے لیکن وفاقی حکومت نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد نہ کر کے مجرمانہ غفلت کا مظاہر ہ کر رہی ہے۔پارلیمنٹ سے بھی نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد کا مطالبہ کیا جا رہا ہے لیکن حکومت کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ رہی۔زاہد خان نے کہا ہے کہ حکومت سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ میں ڈی جی آئی بی کی بریفنگ سے سبق حاصل کرے جس میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردی کا لمبے عرصے تک جاری رہنے کا امکان ہے جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت ابھی تک ٹھوس حکمت عملی اپنانے میں ناکام ہے۔زاہدخان نے کہا کہ افغانستان اور پاکستان کے تعلقات جب تک برابری کی سطح پر نہیںآتے مشکلات میں اضافہ ہوتا رہیگا۔دونوں ممالک کے درمیان موجود بد اعتمادی کے فقدان کے خاتمے کی ضرورت ہے۔