2016 جن کے پاس سفری دستاویزات اور کارڈز موجود ہیں انہیں یہاں کی شہریت دی جائے

جن کے پاس سفری دستاویزات اور کارڈز موجود ہیں انہیں یہاں کی شہریت دی جائے

جن کے پاس سفری دستاویزات اور کارڈز موجود ہیں انہیں یہاں کی شہریت دی جائے

مورخہ 24جنوری 2016ء بروز اتوار

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے سینئر رہنما حاجی محمد عدیل نے کہا ہے کہ یورپ، امریکہ، کینیڈا ،برطانیہ اور آسٹریلیا سمیت دنیا بھر میں 70لاکھ کے لگ بھگ پاکستانی مقیم ہیں جنہیں تین سے پانچ سال کے اندر ان ممالک کی شہریت حاصل ہو گئی تاہم عرصہ 30سال سے پاکستان میں مقیم دستاویزات کے حامل افغان مہاجرین کو پاکستان سے نکالنے کا فیصلہ کیا جا رہا ہے جو کسی طور مناسب نہیں ، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے مسلمان ممالک خصوصاً جن کے پاس تیل کی دولت موجود ہے میں اگر کوئی تیس یا چالیس سال تک بھی مقیم رہے تو وہ اسے نہ تو شہریت دیتے ہیں نہ قومیت اور نہ ہی انہیں پاسپورٹ دیا جاتا ہے ، انہوں نے کہا کہ پاکستان کی صورتحال یکسر مختلف ہے پاکستان اور ہندوستان کے درمیان جو نہرو لیاقت ایکٹ بنا اس میں شہریوں کے تبادلے کی آخری تاریخ 1951مقرر تھی تاہم بعد میں لاکھوں مسلمان پاکستان اور خصوصاً سندھ میں آ کر آباد ہوئے اور بعد ازاں ان کو یہاں کی شہریت بھی دی گئی بلکہ ان کے نام بھی ووٹر لسٹوں میں شامل ہیں ،اسی طرح 20لاکھ بنگالیوں کی آمد اور پھر برما سے آنے والے مسلمانوں کو بھی یہی تمام سہولیات میسر ہیں ،انہوں نے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ افغان مہاجرین جو اپنے ملک میں امن نہ ہونے کی وجہ سے 30سال قبل یہاں آ کر آ باد ہوئے ان کے کاروبار بھی یہاں ہیں اور ان کے بچوں نے یہاں تعلیم بھی حاصل کی لیکن آج انہیں یہاں سے بے دخل کرنے کے بارے میں سوچا جا رہا ہے انہوں نے کہا کہ چند لاکھ افراد کے یہاں قیام سے کوئی قیامت نہیں ٹوٹے گی ،بلکہ اگر انہیں یہاں کی شہریت اور قومیت دے دی جائے تو وہ اپنے کاروبار سے کروڑوں روپے کا ٹیکس بھی حکومت کو ادا کر سکتے ہیں ،اور اس کے ساتھ ساتھ پاکستان میں ہر شعبہ میں اپنی خدمات سر انجام دے سکتے ہیں ،حاجی محمد عدیل نے کہا کہ غیر قانونی طور پر مقیم افغان مہاجرین کو واپس ان کے ملک بھیجنے کیلئے کاروائی کی جائے تاہم جن کے پاس سفری دستاویزات اور کارڈز موجود ہیں انہیں یہاں کی شہریت دی جائے جس سے افغان مہاجرین کا مسئلہ ہمیشہ کیلئے حل ہو جائے گا ۔

شیئر کریں