مورخہ 31مئی2016ء بروز منگل

جماعت اسلامی وفاق کو پیش کردہ نکات پر خیبر پختونخوا میں عملدرآمد کرے،ہارون بشیر بلور
صوبے میں جماعت اسلامی خود حکومت کا حصہ ہے ، عوام کو اشیائے ضروریہ سستے داموں فراہم کرنے کیلئے کیا اقدامات کئے گئے ہیں
ماہ صیام کی آمد سے قبل ذخیرہ اندوز اور گرانفروشوں نے انت مچا رکھی ہے لیکن انہیں کنٹرول کرنے والا کوئی نہیں
بجلی اور گیس کا سوئچ وفاق کے ہاتھ میں ہے ،مرکزی حکومت ماہ صیام اور شدید گرمی میں صوبے کے عوام کی حالت پر رحم کرے

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی سیکرٹری اطلاعات ہارون بشیر بلور نے جماعت اسلامی کی جانب سے رمضان المبارک کیلئے حکومت کو پیش کردہ 18نکات پر حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان میں سے کتنے نکات پر خیبر پختونخوا میں عمل درآمد ہو سکے گا، بعض اخبارات میں شائع ہونے والی خبر پر تبصرہ کرتے ہوئے ہارون بشیر بلور نے کہا کہ پنجاب میں ان نکات پر عمل درآمد کیلئے وفاقی حکومت کو مطالبات پیش کئے گئے ہیں جبکہ خیبر پختونخوا میں جماعت اسلامی خود حکومت کا حصہ ہے ،اور وہ بتائے کہ رمضان میں عوام کو اشیائے ضروریہ سستے داموں فراہم کرنے کیلئے کیا اقدامات کئے گئے ہیں انہوں نے کہا کہ ماہ صیام کی آمد سے قبل ذخیرہ اندوز اور گرانفروشوں نے انت مچا رکھی ہے لیکن انہیں کنٹرول کرنے والا کوئی نہیں ،انہوں نے کہا کہ اسی طرح فحاشی پر مبنی بل بورڈز پشاور اور دیگر اضلاع میں بھی ہیں ان کو ہٹانے کیلئے کیا قدم اٹھایا جائے گا،تاہم صوبائی ترجمان نے کہا کہ بجلی اور گیس کا سوئچ وفاق کے ہاتھ میں ہے اور مرکزی حکومت کو چاہئے کہ ماہ صیام اور شدید گرمی میں صوبے کے عوام کی حالت پر رحم کرے اور بجلی و گیس کی بلا تعطل فراہمی یقینی بنانے کیلئے اقدامات کرے،انہوں نے کہا نے کہا کہ مذہب، پاکستان اور تبدیلی کے نام اور نعروں پر پشتونوں اور صوبے کے استحصال کے فارمولے نا کام ہو چکے ہیں اور عوام کو ان نعروں و حربوں کے ذریعے بے وقوف نہیں بنایا جا سکتا ، انہوں نے کہا کہ صوبے کے جنگ زدہ اور سادہ لوح لوگوں کو مختلف ادوار میں مذہب، پاکستان اور تبدیلی کے نام پر ورغلاتے ہوئے ان کے حقوق پر ڈاکے ڈالے گئے اور ان طریقوں سے نہ صرف یہ کہ عوام کا سیاسی اور اقتصادی استحصال کیا گیا بلکہ صوبے کے اجتماعی حقوق پر سودے بازی بھی کی گئی ، انہوں نے کہا کہ اصلی جنگ پشتونوں کے حقوق کی ہے جبکہ بعض قوتیں اسلام کے نام پر اسلام آباد اور بعض تبدیلی کے نام پر تخت لاہور پر سیاسی قبضہ کرنے کی پالیسیوں پر گامزن ہیں،انہوں نے کہا کہ تاریخی شواہد اس بات کے گواہ ہیں کہ اس صوبے کے حقوق اور مفادات کی جنگ ہر دور میں اے این پی نے ہی لڑی ہے ہم نے اپنے پانچ سالہ دور اقتدار میں صوبے میں بے مثال ترقیاتی منصوبوں کا نہ صرف یہ کہ جال بچھایا بلکہ صوبے کے حقوق کو آئینی تحفظ بھی فراہم کیا تاہم موجودہ نا اہل اور ریموت کنٹرول حکومت نے مصلحت، بارگیننگ اور ادارہ جاتی کرپشن سے ہماری جدوجہد اور کامیابیوں پر پانی پھیر دیا ہے اور اس کے باعث صوبے کے مفادات کو سنگین خطرات کا سامنا ہے۔