مورخہ یکم جون 2016ء بروز بدھ

ترقی کا پہیہ رک گیا ہے، 2018ء میں ترقی کے نئے دور کا آغاز دوبارہ کریں گے،امیر حیدر خان ہوتی
موجودہ صوبائی حکومت سے عوام دوست بجٹ کی توقع رکھنا عبث ہے، گزشتہ تین بجٹ لیپس ہو چکے ہیں
تصوراتی ایجنڈے،غیر ذمہ دارانہ رویے اور غلط پالیسیوں کی وجہ سے صوبہ مسائل کی دلدل میں پھنستا جا رہا ہے ،
اے این پی مخالف قوتیں نہ صرف بوکھلاہٹ کا شکار ہیں ، باچا خان مرکز میں صوبائی کابینہ کے اجلاس سے خطاب

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی نے خیبر پختو نخوا کے عوام سے وعدہ کیا ہے کہ 2018ء کے الیکشن میں کامیابی کے بعد ترقی کے تاریخ ساز منصوبے، روزگار کے مواقع اور صوبے میں ترقی کے نئے دور کا آغاز عوام کے تعاون سے دوباہ شروع کریں گے، اس بات کا اعلان اے این پی کے صوبائی صدر امیر حیدر خان ہوتی نے باچا خان مرکز میں پارٹی کی صوبائی کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر تنظیم سازی اور صوبے کی موجودہ سیاسی صورتحال پر تفصیلی غور کیا گیا، امیر حیدر ہوتی نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت سے عوام دوست بجٹ کی توقع رکھنا عبث ہے،انہوں نے کہا کہ تصوراتی ایجنڈے،غیر ذمہ دارانہ رویے اور غلط پالیسیوں کی وجہ سے صوبہ مسائل کی دلدل میں پھنستا جا رہا ہے ، انہوں نے کہا کہ حکومت اپنے دور اقتدار کا چوتھا بجٹ پیش کرنے جا رہی ہے لیکن افسوس کی بات ہے کہ گزشتہ تین بجٹ لیپس ہو چکے ہیں اور اب چوتھے بجٹ میں عوام ان سے کوئی امید نہ رکھیں،صوبائی صدر نے کہا کہ انتظامی امور سے نا بلد حکو مت کے دور میں ہر طبقہ فکر کے لوگ سراپا احتجاج ہیں،عوامی مسائل کا ادراک نہ رکنھے والی حکومت نہ صرف یہ کہ صوبے کے محدود وسائل استعمال کرنے میں ناکام ہو گئی ہے بلکہ صوبے کو تاریخ کے بدترین مالی و انتظامی بحران سے دوچار کر دیا ہے ، انہوں نے کہا کہ صوبے میں ترقی کا پہیہ رک گیا ہے ،اور حکمران دوسروں پر الزامات لگانے اور پگڑیاں اچھالنے سے فرصت نہیں، تمام امور ٹھپ ہو کر رہ گئے ہیں،جس کا خمیازہ دہشت گردی کے مارے عوام بھگت رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ عوام کی نظریں اے این پی پر لگی ہیں اور اسی سے توقعات وابستہ کر رکھی ہیں،امیر حیدر ہوتی نے کابینہ کے ارکان ،عہدیداروں اور تمام ذیلی تنظیموں کو ہدایات جاری کیں کہ صوبے کے طول و عرض میں رابطہ عوام مہم کو مزید مضبوط بنانے پارٹی کو منظم کرنے اور صوبے و فاٹا کے کونے کونے تک شمولیتی تقاریب مزید بڑھانے کیلئے اپنی تمام توانائیاں بروئے کار لائیں،انہوں نے کہا کہ عوام تبدیلی سرکار کے دعوؤں اور وعدوں کو جان گئے ہیں اور عوام کو 2018کے الیکشن کا اب شدت سے انتظار ہے تا کہ وہ اپنے ساتھ دھوکہ کرنے والوں سے ووٹ کے ذریعے بدلہ لے سکیں،انہوں نے کہا کہ اے این پی کی جڑیں عوام میں مزید مضبوط ہوتی جا رہی ہیں اور یہی وجہ ہے کہ اے این پی مخالف قوتیں نہ صرف بوکھلاہٹ کا شکار ہیں بلکہ اپنی مایوسی کا نزلہ کسی نہ کسی صورت عوام پر گرا رہی ہیں۔