مورخہ 9فروری 2016ء بروزمنگل

تحریک انصاف کی صوبائی حکومت دُہرے معیار کی پالیسیوں پر عمل پیرا ہے۔ زاہد خان
ڈاکٹروں کی ہڑتال سے پیدا شدہ عوامی مشکلات کی ذمہ داری صوبائی حکومت پر عائد ہوتی ہے۔
غریب مریضوں کے علاوہ طبی سہولتوں کے فقدان سے آئی ڈی پیز بھی بری طرح متاثر ہو رہے ہیں۔

پشاور ( پریس ریلیز ) عوامی نیشنل پارٹی کے سیکرٹری اطلاعات زاہد خان نے صوبہ خیبر پختون خواہ میں ہڑتالی ڈاکٹروں کے جائز مطالبات تسلیم کرنے کی بجائے لازمی سروس ایکٹ کے نفاذ کو پی ٹی آئی کادہرا معیار قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ عمران خان نے دور وز قبل بلوچستان میں جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے پی آئی اے میں لازمی سروس ایکٹ کی مخالفت کی ا ور اگلے روز صوبہ خیبر پختون خواہ میں ہسپتالوں کے عملے کیلئے لازمی سروس ایکٹ کا نفاذ کر دیا گیا۔زاہد خان نے مزید کہا کہ صوبہ خیبر پختون خواہ میں ڈاکٹروں کی ہڑتال سے عوام کی مشکلات کی ذمہ دار صوبائی حکومت ہے۔غریب مریض پرائیویٹ ہسپتالوں سے علاج نہیں کرا سکتے۔بڑے سرکاری ہسپتالوں سے غریبوں کے علاج کی سستی سہولت چھین کر صحت کو بھی ٹھیکیداری نظام پر دینے سے پی ٹی آئی کی تبدیلی کا چہرہ سامنے آگیا ہے۔زاہد خان نے کہا کہ صوبہ خیبر پختون خواہ میں ہر گھر دہشت گردی سے متاثرہوا ہے شہداء کے لواحقین اور زخمیوں سے سستی صحت کی سرکاری سہولت واپس لینا عوام دشمنی ہے۔ لاکھوں کی تعداد میں آئی ڈی پیز کے ساتھ بھی ذیادتی اور ظلم ہے ۔ صوبہ خیبر پختون خواہ کے ڈاکٹروں کے جائز مطالبات اور مریضوں کی مشکلات کے خاتمے کیلئے اے این پی عوامی طبقات کے ساتھ ہیں۔