مورخہ 2مارچ 2016ء بروز بدھ
بدامنی کے ناسور کو ختم کرنے کیلئے مصلحتوں سے نکلنا ہوگا، سردار حسین بابک
آئی ڈی پیزہمارے رویوں سے مایوس ہوئے تو دہشتگردی میں اضافے کا خطرہ بڑھ جائیگا
اے این پی نے امن کے قیام کیلئے جو قربانیاں دی ہیں وہ تاریخ کا حصہ ہیں،

پشاور( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ امن کیلئے اشد لازمی ہے کہ وزیرستان کے آئی ڈی پیز کا ہر صورت خیال رکھا جائے۔ اور جو قربانی اُنہوں نے دی ہے اُس کا بھرپور صلہ دیا جائے، اگر وہ ہمارے رویوں سے مایوس ہوئے تو دہشتگردی میں اضافے کا خطرہ بڑھ جائیگا۔اے این پی سیکرٹریٹ سے جاری بیان میں انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے ہمارے ملک میں جاری کرسی کی جنگ کی وجہ مرکزی اور صوبائی حکومتیں قیام امن اور آئی ڈی پیز کی بحالی پر کوئی توجہ نہیں دے پا رہیں جو نہایت تشویشناک ہے۔ ہمارے خطے میں طویل عرصے سے امن ناپید ہے لہٰذا یہ سب سے اہم اور بنیادی مسئلہ سمجھ کر تمام سیاسی پارٹیوں اور تمام مکتبہ فکر کے لوگ اپنے نظریات سے بالا تر ہو کر امن کے قیام کیلئے جدوجہد کریں۔ اس موقع پر ملک کسی بھی محاذ آرائی کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ لہٰذا حکومت وقت کی نزاکت کا احساس کرتے ہوئے امن کے قیام پر توجہ دے۔ انہوں نے کہا کہ دہشتگردی امن کے قیام کیلئے ایک چیلینج ہے ، صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ سیاسی لیڈر شپ اور سول سوسائٹی کو یہ بات ذہن نشین کرنی چاہیے کہ موجودہ صورتحال میں جرأت اور بہادری کیساتھ حالات کا مقابلہ کرنا چاہیے کیونکہ ڈرنے یا خوف زدہ ہونے سے دہشتگردی اور انتہا پسندی کی یہ بلا نہیں ٹل سکتی۔موجودہ وقت صرف ہم سے جرأت اور بہادری کا تقاضہ کرتا ہے تاکہ اپنے معاشرے اور آئندہ نسل کو ایک پر امن اعتدال پسند مستقبل دینے میں کامیاب ہو سکے۔ سردار حسین بابک نے کہا کہ اے این پی نے امن کے قیام کیلئے جو قربانیاں دی ہیں وہ تاریخ کا حصہ ہیں اور وہ دن دور نہیں جب ان قربانیوں کے نتیجے میں دھرتی امن کا گہوارہ بن جائے گی ،انہوں نے کہا کہ امن کے بغیر ترقی ناممکن ہے اور امن کو یقینی بنانے کیلئے سب نے اپنا اپنا کردار ادا کرنا ہے۔ بدامنی نے ہماری معیشت کو تباہ کر دیا ہے لہٰذا اب وقت آچکا ہے کہ بدامنی کے اس ناسور کو ختم کرنے کیلئے مصلحتوں سے نکلنا ہوگا۔اُنہوں نے کہا کہ ملک اور خصوصاً خیبر پختونخواہ اور قبائلی علاقہ جات میں بدامنی نے پختونوں کو بے پناہ نقصان پہنچایا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ فخر افغان باچا خان اور ان کے ساتھیوں نے عدم تشدد سے محبت اور تشدد سے نفرت کا درس دیا ہے۔ اور اسی فلسفے پر عمل پیرا ہو کر اے این پی نے ہر دور میں امن کے قیام کیلئے لازوال قربانیاں دی ہیں اور اب تک اپنی جدوجہد جاری رکھی ہوئی ہے۔