مورخہ : 22.4.2016 بروز جمعہ
احتساب اور کرپشن فری پاکستان کا نعرے لگانے والے پہلے خود اپنا احتساب کریں۔ امیر حیدر خان ہوتی
خیبر بنک کے معاملے کی تحقیقات کیلئے وزراء پر مشتمل کمیشن کا قیام دوغلا پن ہے۔
خیبر لیکس کا معاملہ سنگین نوعیت کا ہے، کپتان تضادات کا شکار ہو چکے ہیں۔
اے این پی تمام اداروں کے بلا امتیاز احتساب کی خواہاں ہے۔ ڈاگئی میں شمولیتی اجتماع سے خطاب

پشاور ( پریس ریلیز ) سابق وزیراعلیٰ اور اے این پی کے صوبائی صدر امیرحیدرخان ہوتی ایم این اے نے آرمی چیف جنرل راحیل شریف کی طرف فوج میں احتساب کے عمل کا خیر مقدم کرتے ہوئے اسے سراہاہے اورکہاہے کہ عوامی نیشنل پارٹی تمام اداروں کے بلا امتیاز احتساب کی خواہاں ہے۔کرپشن فری پاکستان کا نعرے لگانے والوں کو پہلے اپنی جماعت کو کرپشن سے پاک کرنا چاہئے۔کپتان وفاق میں چیف جسٹس کی نگرانی میں پانامہ لیکس کے معاملات کی تحقیقات کامطالبہ کررہے ہیں جبکہ صوبے میں اپنے وزیر کی مبینہ کرپشن کی تحقیقات عدلیہ کی بجائے اپنے وزیروں سے کرواہارہے ہیں یہ دوغلا پن نہیں چلے گا۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا وہ وفاق میں چوہدری نثار اور خواجہ آصف کی نگرانی میں کمیشن کو تسلیم کریں گے؟ وہ جمعہ کی شام ڈاگئی میں ممتاز شخصیت قاضی باچہ اوران کے سینکڑوں ساتھیوں کی اے این پی میں شمولیت کے موقع پر جلسے سے خطاب کررہے تھے جس سے رکن اسمبلی احمد بہادرخان ،پارٹی کے ضلعی جنرل سیکرٹری لطیف الرحمان ،ضلعی کونسلر مختیار لالا اوردیگرنے بھی خطاب کیا ۔امیرحیدرخان ہوتی نے کہاکہ ہم پہلے دن سے احتساب کے حامی ہیں اورپانامالیکس کے معاملے پر چیف جسٹس کی نگرانی میں کمیشن کے خواہاں ہیں۔ انہوں نے کہاکہ خیبرلیکس کا معاملہ انتہائی سنگین ہے صوبائی حکومت صفائی پیش کرنے کی بجائے عوام کوجواب دیں۔ انہوں نے کہاکہ خیبربنک کی انتظامیہ کی طرف سے صوبائی وزیرخزانہ پر لگائے گئے الزامات انتہائی تشویشناک ہیں اور جماعت اسلامی کو فری کرپشن پاکستان سے پہلے جماعت اسلامی کو کرپشن سے پاک کرناچاہئے۔ انہوں نے کہاکہ کپتان بھی تضادات کے شکارہوچکے ہیں اوران کی صوبائی حکومت میں الٹی گنگا بہتی ہے ایک طرف سے وزیر کے احتساب کے لئے وزیر کی نگرانی میں کمیشن قائم کیاگیاہے جبکہ دوسری طرف وزیراعلیٰ تحقیقات سے قبل اپنے وزیرخزانہ کی بے گناہی کے راگ الاپ رہے ہیں یہ دوغلا اب نہیں چلے گا۔ پختون جاگ گئے ہیں اوران حکمرانوں کے کرتوں کو جان چکے ہیں ان کاکہناتھاکہ 2018میں ووٹ کے ذریعے اپنے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں کا بدلہ چکادیں گے۔ امیرحیدرخان ہوتی نے کہاکہ عمران خان اورمیاں نوازشریف دونوں پنجاب کی سیاست کررہے ہیں ایک پہلی بار اوردوسرا چوتھی بار وزیراعظم بننے کے چکرمیں ہیں۔ ان کاکہناتھاکہ ہم نے حکمرانوں کو بھرا خزانہ چھوڑ دیاتھا آج صورتحال یہ ہے کہ حکومت کے پاس تنخواہوں کے علاوہ پیسے نہیں ہے اقتدار میں آکر ان سے حساب کتاب لیں گے ۔انہوں نے کہاکہ ہمارے دورمیں ترقی کا پہیہ چل رہاتھا تین سال گزرنے کے باوجود موجودہ حکمرانوں نے ایک اینٹ تک نہیں رکھی۔ انہوں نے اے این میں شمولیت اختیا رکرنے والوں کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہاکہ آج پختون قوم کے باہمی اتحاد واتفاق کی ضرورت ہے اوراس مقصد کے لئے وہ چترال سے ڈیر ہ اسماعیل خان تک سرخ جھنڈے تلے پختون کو متحد کرنے کے لئے نکلے ہیں۔انہوں نے مزید کہاکہ آنے والا دور اے این پی کا ہے اوراس کاواضح ثبوت یہ ہے کہ اپوزیشن میں ہوتے ہوئے لوگ دھڑادھڑ ہمارا ساتھ دے رہے ہیں ۔